پختونخوا حکومت کا صوبے کے اندر کرونا کیسز میں واضح کمی کا دعویٰ

88145271_2571647899770018_4416487691923750912_n.jpg

پشاور:خیبر پختونخوا حکومت کے مطابق صوبے میں کورونا وائرس کے کیسز میں واضح کمی آئی ہے اور اسپتالوں میں کورونا مریضوں کے لیے مختص 50 فیصد بستر خالی ہیں۔

پشاور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے مشیر اطلاعات خیبرپختونخوا اجمل وزیر کا کہنا تھا کہ اللہ کے فضل و کرم سے خیبر پختونخوا میں کورونا کیسز میں کمی آئی ہے اور  کورونا سےشرح اموات 5.2 سےکم ہو کر 3.6 فیصد ہوگئی ہے جب کہ  صوبے میں روزانہ ہونے والے ٹیسٹ میں مثبت کیسز کی شرح 25 سےکم ہوکر 15فیصد ہوگئی ہے۔

اجمل وزیر کاکہنا تھا کہ  اب تک 1 لاکھ 54 ہزار 278 کورونا ٹیسٹ کیے جا چکے ہیں، صوبے کے اسپتالوں میں 5 ہزار 440 بستر کورونا مریضوں کے لیے مختص ہیں جن میں سے 50 فیصد بستر زیر استعمال ہیں اور  اس وقت اسپتالوں میں 63 مریض وینٹی لیٹر پر ہیں۔

اجمل وزیر کا کہنا تھا کہ کیسز کو دیکھنے کے بعد اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ کیا جاتا ہے، اس وقت صوبےکے 244علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ ہے، اسمارٹ لاک ڈاؤن کے ذریعے 8 لاکھ سے زائد افراد گھروں پر ہیں، لاک ڈاؤن والے ان علاقوں میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 2 ہزار 754 ہے۔

مشیر اطلاعات  کا کہنا تھا کہ مجموعی طور پر 27 ہزار مسافروں کی پشاور ائیرپورٹ پر آمدورفت ہوئی ہے۔ائیرپورٹ آنے اور جانے والے مسافروں کی اسکرینگ کی جارہی ہے، مسافروں کو چیک کرنے کے لیے بھرپور انتظامات کیے گئے ہیں، 13 ڈاکٹرز سمیت 32 افراد پر مشتمل طبی عملہ ائیرپورٹ پر تعینات ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بیرون ملک پاکستانیوں کی مشکلات کے باعث ان کی واپسی کے لیے فلائٹ آپریشنز شروع کیا، بیرون ملک انتقال کرنےوالے 64 پاکستانیوں کے جسد خاکی واپس لائے گئے، آج مزید14 میتیں لائی گئی ہیں۔

واضح رہے کہ خیبر پختونخوامیں کورونا کے تصدیق شدہ افراد کی تعداد 28 ہزار سے تجاوز کرچکی ہے جب کہ 1038 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top