موجودہ حکمرانوں نے عوام کو اپنے ایجنڈے سے خارج کردیا ہے،آفتاب احمد خان شیرپاؤ

aftab-ahmed-khan-sherpao-1024-e1555093840757.jpg

پشاور: قومی وطن پارٹی کے چیئرمین آفتاب احمد خان شیرپاؤ نے کوئٹہ دھماکہ کی مزمت کرتے ہوئے کہا کہ اگر جسٹس قاضی فائز عیسیٰ رپورٹ پرعملدرآمد کیا جاتا تو آج ملک میں سیکورٹی کی صورتحال یکسر مختلف ہوتی،کوئٹہ سانحہ پر دلی رنج و غم ہوا جس میں معصوم نمازیوں کو نشانہ بنایا گیا۔

ان خیالات کا اظہار انھوں نے وطن کور پشاور میں پارٹی کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔آفتاب شیرپاؤ نے کوئٹہ مسجد دھماکے میں شہید ہونے والے افراد بشمول ڈی ایس پی کی شہادت اور دیگر مجروحین کے خاندانوں سے اظہار ہمدردی کرتے ہوئے کہا کہ واقعہ حکومت کی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔انھوں نے مزید کہا کہ موجودہ حکومت کی مثال ایک بے سمت کشتی کی ہے جو کہ اپنا سمت کھو چکی ہے اور حکمرانوں کو اندازہ ہی نہیں کہ موجودہ حالات سے کیسے نبرد آزما ہونا ہے۔

انھوں نے کہا کہ بلوچستان میں پے در پے دہشتگردی کے واقعات سے وہاں کے لوگوں کی مشکلات میں اضافہ ہو گیا ہے کیونکہ حکومت ان کو تحفظ فراہم کرنے میں ناکام رہی ہے۔انھوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ امن و امان کا قیام اور شہریوں کے جان و مال کا تحفظ حکومت کی اولین ذمہ داری ہے لیکن موجودہ حکمران اپنے فرائض سے غافل ہیں۔

آفتاب احمد  شیرپاؤ نے کہا کہ مہنگائی،بے روزگاری اور معاشی بد حالی کے مارے عوام کو امن و امان کی بد ترین صورتحا ل کے رحم و کرم پر چھوڑنا موجودہ حکومت کی غفلت اور انتہائی غیر سنجیدگی کامظاہرہ ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ موجودہ صورتحال میں ایسے دکھائی دے رہا ہے کہ حکمرانوں نے عوام کو اپنے ایجنڈے سے خارج کردیا ہے اوران کا کوئی پرسان حال نہیں۔ انھوں نے کہا کہ تاریخ کی بد ترین مہنگائی و بے روزگاری اور بلوچستان میں دہشت گردی کے پے در پے واقعات نے نہ صرف حکومت کی کارکردگی کی قلعی کھول دی بلکہ عوام بھی حکومت سے متنفر ہو کر مایوس ہو چکے ہیں اور ان میں شدید اضطراب اور خوف و ہراس پھیل چکا ہے۔

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top