آئندہ نواز شریف اور زرداری کو قریب لانے کیلئے کوششیں نہیں کروں گا،مولانا فضل الرحمن

Fazal-ur-Rehman.jpg

متحدہ مجلس عمل کے صدر اور جمعیت علماء اسلام (ف) کے امیر مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ وہ باقی زندگی میں پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری اور پاکستان مسلم لیگ(ن) کےقائد نواز شریف ایک دوسرے کے قریب لانے کی کوشش نہیں کریں گے۔

یہ تینوں بزرک سیاستدانان پاکستان کے سیاسی منظرنامے میں کافی اہمیت کے حامل ہیں اور ان کی متفقہ اپوزیشن کسی بھی حکومت کو ٹف ٹائم دے سکتی ہے

جے یو آئی کے امیر کو پاکستان کے سیاسی حلقوں میں اس حوالے سے بڑے متعبر سمجھا جاتا ہے اور خیال کیا جاتا ہے کہ مولانا کو یہ شرف حاصل ہے کہ وہ اپنے سیاسی تجربے کے بنیاد پربوقت ضرورت تمام سیاسی جماعتوں کو ایک نقطے پر لاسکتے ہیں اور سیاسی لوگوں کی طرف سے ایک متفقہ بیانیہ بنانے میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں.

میڈیا رپورٹس کے مطابق صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ میں اب آئندہ آصف زرداری اور نواز شریف کے درمیان اختلافات کو ختم کرنے کی مزید کوشش نہیں کروں گا، مولانا نے کہا ان دوریوں کو ختم کرنے کی کوشش کی لیکن ان دونوں کی ایک دوسرے سے شکایتیں ابھی بھی برقرار ہیں۔

 

ان کا کہنا تھا کہ دونوں کے درمیان دوریاں ختم کرانا اب میری کوشش نہیں بلکہ خواہش ہے کیونکہ موجودہ صورتحال میں یہ بہت ضروری ہے کہ اپوزیشن متحد ہو۔

جے یو آئی (ف) کے سربراہ کا کہنا تھا کہ سیاست میں اختلاف رائے اور گلے شکوے معمول کی بات ہے، تاہم ان اختلافات کو دور ہونا چاہیے اور اپوزیشن کو متحد ہونا چاہیے.

خیال رہے کہ گزشتہ مہینے اپوزیشن نے فوجی عدالتوں میں دوسری مرتبہ توسیع سمیت مختلف معاملات پر اپوزیشن کی مشترکہ حکمت عملی اپنانے کے لیے ایک مشترکہ کمیٹی بنانے کا فیصلہ کیا تھا۔

اس مشترکہ حکمت عملی کا فیصلہ 15 جنوری کو قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اور مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف کی زیر صدارت اپوزیشن رہنماؤں کے اجلاس میں کیا گیا تھا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

scroll to top